Latest Posts

’بلیک پینتھر‘ نے تاریخی فلم ’ٹائی ٹینک‘ کو پیچھے چھوڑ دیا

Box Office: 'Black Panther' Sinks 'Titanic,' Tops $1.3 Billion, Wins 'Black Jeopardy'
مارول اسٹوڈیوز کے سینما یونیورس کے بینر تلے رواں برس 16 فروری کو ریلیز ہونے والی سیاہ فام سپر ہیروز فلم 'بلیک پینتھر‘ نے ایک اور سنگ میل عبور کرلیا.

فلم نے اب تک جہاں دنیا بھر سے ایک ارب 29 کروڑ 98 لاکھ 55 ہزار 740 ڈالرز(پاکستانی ایک کھرب 29 ارب 98 کروڑ 55 لاکھ 7 ہزار روپے سے زائد) بٹورے ہیں، وہیں یہ اب تک ہولی وڈ کی سب سے زیادہ کمائی کرنے والی دسویں نمبر پر بھی آ چکی ہے۔

تاہم 3 دن قبل اس فلم نے 1997 میں ریلیز ہونے والی شہرہ آفاق تاریخی ڈزاسٹر فلم ’ٹائی ٹینک‘ کو بھی کمائی کے لحاظ سے پیچھے چھوڑ کر ایک نیا سنگ میل عبور کرلیا۔

’بلیک پینتھر‘ نے اب تک صرف امریکی باکس آفس سے 66 کروڑ 53 لاکھ 55 ہزار 740 ڈالرز (پاکستانی 66 ارب 53 کروڑ 55 لاکھ 7 ہزار روپے سے زائد) کما کر ’ٹائی ٹینک‘ کو بھی پیچھے چھوڑ دیا۔

بلیک پینتھر اتنی کمائی کے بعد اب امریکی باکس آفس پر سب سے زیادہ کمائی کرنے والی تیسری بڑی فلم بن گئی، اس سے قبل تیسری بڑی فلم ’ٹائی ٹینک‘ تھی۔

قریبا ایک دہائی تک دنیا بھر اور امریکا بھر کی بکس آفس پر راج کرنے والی ٹائی ٹینک اب چوتھی نمبر پر چلی گئی۔

اب ’بلیک پینتھر‘ کا مقابلہ 2015 میں ریلیز ہونے والی اسٹار وارز: دی فورس اویکننگ اور 2009 میں ریلیز ہونے والی ’اوتار‘ سے ہے۔

اس وقت ’ اسٹار وارز: دی فورس اویکننگ‘ 93 کروڑ 67 لاکھ ڈالرز کی کمائی کے ساتھ امریکی باکس آفس پر پہلے جب کہ ’اوتار‘ 70 کروڑ 50 لاکھ ڈالرز سے زائد کمائی کے ساتھ دوسرے نمبر پر موجود ہے۔

امکان ہے کہ اگلے ہفتے تک ’بلیک پینتھر‘ ’اوتار‘ کو بھی پیچھے چھوڑ دے گی۔

واضح رہے کہ ’بلیک پینتھر‘ اب تک کی ہولی وڈ کی وہ واحد سائنس فکشن سپر ہیروز فلم ہے، جس میں پہلی بار سیاہ فام ہیروز کو متعارف کرایا گیا ہے۔

اس فلم کو ریلیز سے قبل ہی کئی اہم شوبز ویب سائٹس نے کامیاب قرار دیتے ہوئے 100 میں سے 90 سے 99 تک نمبرز دیے تھے۔

یہی نہیں بلکہ اس فلم کی تعریف میں امریکا، برطانیہ و یورپ کے کئی اہم سیاستدان بھی میدان میں آگئے اور انہوں نے اس فلم کو ایک بہترین تبدیلی و انقلاب سے تشبیح دی تھی۔

سابق امریکی صدر براک اوباما کی اہلیہ مشعل اوباما نے تو سیاہ فام سپر ہیروز کی اس فلم کو خواتین اور افریقی نژاد عوام اور خصوصا سیاہ رنگت کی نسل کے افراد کے لیے اہم تبدیلی کا آغاز قرار دیا تھا۔

فلم ساز ریان کوگلر کی اس فلم کی کہانی امریکا میں 1960 اور 1970 کی دہائی میں شائع ہونے والے سیاہ فام سپر ہیروز کے کامک ناول ’بلیک پینتھر‘ سے ماخوذ ہے۔

فلم میں افریقہ کے ایک گمشدہ حصے کو دکھایا گیا ہے، فلم میں شاہی روایات اور ٹیکنالوجی کی ترقی کے نئے ڈرامائی اندازوں کو بھی بھرپور دکھایا گیا ہے۔

اگرچہ اس فلم کو تھری ڈی میں پیش نہیں کیا گیا، تاہم فلم کے سیٹ، کاسٹیومز اور دیگر پہلو لوگوں کی توجہ اپنی جانب کھینچ لیتے ہیں۔

HD Photos Designed by Templateism.com Copyright © 2014

Theme images by Bim. Powered by Blogger.